inda angints pakistan

ٹوئٹر پر پاک فوج کے خلاف مہم کے پیچھے خفیہ بھارتی پروپیگنڈے کا انکشاف

eAwaz ورلڈ

امریکی ریاست کیلیفورنیا کی اسٹینفورڈ یونیورسٹی کی تحقیق کے مطابق رواں سال کے اوائل میں سوشل میڈیا نیٹ ورک کی جانب سے معطل کیا گیا بھارتی فوج کا حامی خفیہ اکاؤنٹ پاک فوج کے خلاف ٹوئٹر پر پروپیگنڈا کرنے میں ملوث تھا اور مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کی کامیابیوں کو سوشل میڈیا کے ذریعے اجاگر کرنے کی کوشش کررہا تھا۔

رپورٹ کے مطابق اسٹینفورڈ انٹرنیٹ آبزرویٹری کی تحقیق میں ایک بھارتی نیٹ ورک کے اکاؤنٹ کا حوالہ دیتے ہوئے کہا گیا کہ ‘آئی ایس پی آر نے انتہائی محتاط طریقے سے تیار کیے گئے انٹرن شپ پروگرام کے ذریعے گزشتہ دہائی کے دوران 4 ہزار بااثر اعلیٰ تعلیم یافتہ جنگی ماہرین کے ایک حیران کُن نیٹ ورک کو تیار کیا، یہ پروگرام آئی ایس آئی کی زیر قیادت کام کرتا ہے’۔

اسٹینفورڈ یونیورسٹی کی ویب سائٹ میں شائع ایک رپورٹ جس کا عنوان ‘میرا دل کشمیر سے وابستہ ہے: ٹوئٹر پر بھارتی فوج کے خفیہ حمایتی آپریشن کا تجزیہ’ تھا، اسٹینفورڈ انٹرنیٹ آبزرویٹروی کی رپورٹ کے مطابق اس نیٹ ورک کے بیانیے، استعمال کردہ ہتھکنڈوں اور رابطے ‘چنار کور’ کے ساتھ ملتے ہیں، چنار کور مقبوضہ کشمیر میں کام کرنے والی بھارتی فوج کی شاخ ہے۔

رپورٹ میں بتایا گیا کہ سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر اور محققین نے بھارتی فوج کے نیٹ ورک کو دستیاب شواہد کی بنیاد پر کسی بھی شخص یا ادارے کے ساتھ منسوب نہیں کیا، لیکن رپورٹ میں بھارتی اخبار کے مضامین کو نمایاں کیا گیا ہے جس میں ٹوئٹر، فیس بُک اور انسٹاگرام نے چنار کور کے سرکاری اکاؤنٹ کو مربوط غیرمستند رویے کی بنیاد پرعارضی طور پر معطل کردیا ہے۔

رپورٹ میں یہ بھی بتایا گیا کہ ٹوئٹر نیٹ ورک کا مواد چنار کور کے مقاصد سے مطابقت رکھتا ہے، مقبوضہ کشمیر میں بھارتی فوج کے کام کی تعریف کرنے والا بھارتی فوج کا آفیشل اکاؤنٹ ‘چنار کور’ سب سے زیادہ ری ٹوئٹ ہونے والا ساتواں اکاؤنٹ ہے۔

یہ نیٹ ورک پچھلے سال ٹوئٹر پر سب سے زیادہ سرگرم تھا، جس کے بعد ٹوئٹر نے اس نیٹ ورک کے خاص حصے کو مارچ 2022 میں پلیٹ فارم کے قواعد کی خلاف ورزی کی بنیاد پر معطل کردیا تھا جہاں مانا گیا تھا کہ یہ اکاؤنٹ بھارت سے چلایا جارہا ہے۔

نیوز سورس ڈان نیوز